Featured Post

Wake-up Call to Muslims , Scholars & Humanity ! جاگو جاگو جاگو امت مسلمہ

Presently the societies are in a state of ideological confusion and flux. Materialism, terrorism, ignorance and intolera...

27.1.15

German footballer Danny Blum converted to Islam

CAIRO: Young German footballer Danny Blum has announced his reversion to Islam, describing it as a religion of hope and strength.

Danny Blum said, “Islam gave me strength. Pray calms my soul.”

“I was short-tempered, erratic and did not know where I belong,” he added.

misconception

Blum joined FC Nürnberg in Bavaria last July. The team plays in the he Second Division of professional football in Germany, the Bundesliga.

Shortly after joining the team, he injured his knee and was forced eventually to take six months off.

A few weeks ago, he took the decision to revert to Islam, joining the world’s fastest growing religion. “Living in the lap of luxury. Every weekend make alarm. No responsibility for anything. And what actually comes after retirement?” the questions came to Blum as he sat at home.

“I have visited a mosque and I immediately risen the heart. I felt this is something for me and wanted to know more,” Blum told Bild.

Ever since, he prays five times a day and eat halal food. Informing his parents with his decision, the 24-year-old player said they were scare at first.

“They are devout Christians. But soon they said that I have to go that route if I believe that it is right,” he said.

4.1.15

Prophet Muhammad (pbuh), The Glorious example

THE prophet of God (PBUH) was the noblest of humans. His conduct was declared by God as the glorious example, and was an embodiment of sympathy, tolerance, justice, humility, magnanimity and many other attributes quite apart from being most notably the truthful (al-Sadiq) and trustworthy (al-Amin).

The fact that he was unanimously accepted as truthful (al-Sadiq) was confirmed at the beginning of his prophetic mission by his sworn enemies too, who acknowledged unanimously that he couldn’t make an untrue claim when he ascended Mount Safa, calling their attention to ask if they would believe him if he claimed that the enemy was preparing to launch an attack on Makkah. Many of the same people became so aggressive that he had to migrate to Madinah, but they still considered him to be so trustworthy that he had with him many of their valuables which, before leaving Makkah, he gave to his cousin, Ali, to be returned.

Khadija, his wife, the person closest to him, confirmed when he received the first revelation that he was an extremely sympathetic person to whom God would not cause any harm. The Qur’an he presented as God’s word preached forgiveness for enemies and he himself demonstrated that attribute like no one else could. He preached and practiced religious tolerance in a way that Jews and Christians were given the freedom to practice their faith in the city-state of Madinah where he literally enjoyed full administrative authority. He declared killing a human being as big a crime as killing all of humanity. He didn’t allow his companions to consider him higher in status than any of the other prophets. He taught them not to doubt the intentions of others even if there were strong reasons to do so. He implemented the dictates of justice on himself and his very close relatives and friends first, before expecting others to be judged by them. The list of moral virtues he preached and practiced at the highest level of expectation is endless.

The Qur’an must be read with deep reflection to understand its meaning.
What we find today in the conduct of the people who claim to be his followers is, however, in many cases completely the opposite of his glorious example. If we trace the causes, we find one reason more than any other: there is an absence of a serious effort to understand the message the prophet of God brought. Instead of critically examining the contents of the Qur’an to find what it is requiring the believer to acknowledge and practice, exceptions apart, Muslims have chosen to emotionally and blindly follow what their elders taught them, primarily from sources outside the Qur’an. The result is that instead of understanding the message of the Qur’an as a coherent narrative, Muslim groups have accepted as their religious understanding messages that are different and in some cases divergent from what others have accepted.

The Qur’an has two sets of rules mentioned side by side which can easily be deciphered through a serious reading of the text. There are rules that were meant for the prophet and the people who received the message of God directly from him and there were others that were universal. The Qur’an is unambiguous in presenting the two sets of rules as distinctly applicable to the immediate addressees and to humanity respectively. However, if the unwitting reader is bent upon considering each and every verse of the Qur’an universally applicable, he is bound to generalise what was meant to be era-specific.

The Qur’an talks about deliberate deniers of truth (Kuffar) worthy of God’s punishment even in this life for rejecting the truth they received directly from the messenger. The result of generalising era-specific verses caused some zealots to search for Kuffar from among non-Muslims as well as, at times, from within Muslims, to take them to task. Without bothering to distinguish between verses meant for all times and those that were describing God’s displeasure against the immediate enemies of His messenger, many Muslims chose to generalise that displeasure to apply to those people who in reality deserved to be sympathised with and properly informed about the message, like the messenger of God did in his prophetic mission.

The way out of this predicament is to teach Islam in a way that the Qur’an is read with deep reflection for understanding its meaning, ensuring that all religious sources outside the Qur’an including the hadith are understood in the light of its text. The Qur’an-centred approach of learning Islam would ensure that the focus of affiliation of faith would shift from sectarian rhetoric to the text of the Qur’an. As a result, Muslims would rely more on the meaning of the book of God instead of hearsay-based information that has not only divided Muslims but also presented a skewed message of the sirah of the prophet, which when it is understood in the light of the Qur’an gives the message of a faith which is enlightening, tolerant, humane, and convincing.
Courtesy Dawn.com
By Khalid Zaheer. The writer is a religious scholar.  kzuiuk@gmail.com





میلادا لنبیﷺ کی شرعی حیثیت Mailad Nabi & Shariah

میلاد‘‘ کے معنی ہیں: ''پیدائش کا وقت‘‘ اور ''مَولِد‘‘ کے معنی ہیں: ''پیدائش کی جگہ یا وقت‘‘ ، دراصل یہ ظرف کا صیغہ ہے اور ظرف زمانی بھی ہوتا ہے اور مکانی بھی، یعنی کسی واقعے کے رونما ہونے کا زمانہ یا مقام، یعنی زمانۂ ولادت یا مقامِ ولادت۔ میلادالنبیﷺ کے معنی ہیں: ''نبیِ کریمﷺکی ولادتِ باسعادت کے احوال بیان کرنا‘‘۔ حدیثِ پاک کی مستند کتاب ''سننِ ترمذی‘‘ میں ہے: ''بَابُ مَاجَائَ فِیْ مِیْلَادِالنَّبِیِّﷺ‘‘، ''یعنی میلادالنبیﷺ کا بیان‘‘۔ اس باب کے تحت امام ابو عیسیٰ ترمذی اپنی سند کے ساتھ قیس بن مَخرمہ سے روایت کرتے ہیں کہ انہوں نے کہا: میں اور رسول اللہﷺ ''عامُ الفیل‘‘ میں پیدا ہوئے اور حضرت عثمانؓ نے قُباث بن اَشیَم سے پوچھا: عمر میں آپ بڑے ہیں یا رسول اللہﷺ؟، تو انہوں نے کہا: (مرتبے میں تو یقینا) رسول اللہﷺ مجھ سے بڑے ہیں؛ البتہ میری ولادت اُن سے پہلے ہوئی۔ رسول کریمﷺ عامُ الفیل میں پیدا ہوئے (سنن ترمذی: 3619)‘‘۔ اس حدیث میں رسول اللہﷺ کے زمانۂ ولادت بیان کرنے کو ''میلادالنبیﷺ‘‘ کا عنوان دیا گیا۔
اﷲ تعالیٰ کا ارشاد ہے: ''(حضرت یحییٰ علیہ السلام کے بارے میں فرمایا) اور ان پر سلام ہو جس دن وہ پیدا ہوئے اور جس دن ان کی وفات ہو گی اور جس دن وہ زندہ اٹھائے جائیں گے، (مریم:15)‘‘۔ ''(حضرت عیسیٰ علیہ السلام فرماتے ہیں) اور مجھ پر سلام ہو جس دن میں پیدا کیا گیا اور جس دن میری وفات ہو گی اور جس دن میں (دوبارہ) زندہ اٹھایا جاؤں گا، (مریم:33)‘‘۔ ان دونوں آیاتِ مبارَکہ سے معلوم ہوا کہ انبیائِ کرام ؑکی ولادت کے دن اُن پر سلام بھیجنا سنتِ الٰہیہ ہے اور خود سُنّتِ انبیاء ؑبھی ہے۔ اور یہ مسلَّمہ اصول ہے کہ سابق انبیائِ کرام ؑکے حوالے سے جو امور قرآن مجید میں بطورِ فضیلت بیان فرمائے گئے ہیں اور اُن کی ممانعت نہیں فرمائی گئی، وہ ہماری شریعت میں بھی جائز ہیں۔
مسلمانوں کے میلادالنبیﷺ منانے کا مقصد اس کائنات میں رسول اللہﷺ کی تشریف آوری پر اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں تشکُّر کا اظہار کرنا، رسول اللہﷺ کی ولادتِ باسعادت کے احوال، آپ کے نسبِ پاک اور فضائل کا بیان کرنا ہے اور یہ خود رسول اللہﷺ سے ثابت ہے: ابوقتادہ انصاری رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں: ''رسول اللہﷺ سے سوموار کے روزے کی بابت پوچھا گیا، آپﷺ نے فرمایا: اس دن میری ولادت ہوئی اور اسی دن میری بعثت (اعلانِ نبوت) ہوئی یا مجھ پر (پہلی بار) وحی نازل ہوئی، (صحیح مسلم:2745)‘‘۔ اس حدیثِ پاک سے معلوم ہوا کہ رسول کریمﷺ اپنی ولادتِ باسعادت کے شکرانے کے طور پر سوموار کے دن نفلی روزہ رکھا کرتے تھے اور ولادتِ مصطفیﷺ کا تشکُّر خود رسول اللہﷺ کی سنت ہے۔ اس حدیث کی شرح میں ملاّ علی قاری لکھتے ہیں: ''اس حدیث میں اس بات پر دلالت ہے کہ جس جگہ اور جس زمانے میں کوئی مبارک و مسعود واقعہ ہوا ہو، تو اس کی وجہ سے اس زمان و مکان کو شرَف و برکت مل جاتی ہے، (مرقاۃ المفاتیح، جلد:4، ص:475)‘‘۔ سنن ترمذی: 746 اور سننِ ابوداؤد: 2452 اور سننِ نسائی: 2419 میں بھی نبیِ کریمﷺ کے سوموار کے نفلی روزے کا بیان ہے۔ اسی طرح رسول اللہﷺ سے اپنے نسبِ پاک کا بیان بھی ثابت ہے۔ ''واثلہ بن اسقع رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں نے سنا: رسول اللہﷺ فرما رہے تھے: اللہ تعالیٰ نے اولادِ اسماعیل میں سے کِنانہ کو چن لیا اور کنانہ کی اولاد سے قریش کو چن لیا اور قریش میں سے بنو ہاشم کو چن لیا اور بنو ہاشم میں سے مجھے چن لیا، (صحیح مسلم:2276)‘‘۔ حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہﷺ نے خطبہ دیتے ہوئے اپنے والدِ ماجد حضرت عبداللہ سے بائیسویں پشت پر حضرت عدنان تک اپنا نسب بیان فرمایا اور فرمایا: جب بھی لوگوں کے دو گروہ ہوئے، اللہ تعالیٰ نے مجھے ان میں سے بہتر گروہ میں رکھا، میں (جائز) ماں باپ سے پیدا کیا گیا ہوں، مجھے زمانۂ جاہلیت کی
بدکاری سے کوئی چیز نہیں پہنچی۔ میں نکاح سے پیدا کیا گیا ہوں، بدکاری سے پیدا نہیں کیا گیا۔ حضرت آدم و حوا ؑسے لے کر نسب کی پاکدامنی کا یہ سلسلہ میرے والدین تک قائم رہا، میں بطورِ شخصیت کے تم سب سے بہتر ہوں اور بطور باپ کے تم سب سے بہتر ہوں، (دلائل النبوۃ، جلد:1،ص:174-175)‘‘۔
آپﷺ سے روایت کردہ احادیث کا مفہوم یہ ہے کہ آپ کا نورِ نبوت اور نسب حضرت آدم و حوا علیہماالسلام سے لے کر حضرت عبداللہ و آمنہ تک مسلسل پاک پشتوں سے پاکیزہ ارحام میں منتقل ہوتا رہا اور آپ کے تمام آباء اور اُمَّہات میں عہدِ اسلام کے طریقۂ نکاح کے مطابق رشتۂ ازدواج قائم ہوا، لہٰذا آپ کا پورا سلسلۂ نسب طیب و طاہر اور کائنات میں سب سے اعلیٰ ہے، بیہقی کی ''دلائل النبوۃ ‘‘ اور محمد بن یوسف صالحی کی ''سُبُلُ الھدیٰ والرشاد فی سیرۃ خیرالعباد‘‘ اور دیگر کتبِ سیرت میں یہ احادیث موجود ہیں۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ رسول اللہﷺ اس کائنات میں اﷲ تعالیٰ کی سب سے بڑی نعمت ہیں اور اس کی بے شمار نعمتوں میں سے واحد نعمت ہے کہ جس کا اس نے بطورِ خاص اہلِ ایمان پر احسان بھی جتلایا ہے، ارشاد ہوا: ''یقینا اﷲ تعالیٰ نے اہلِ ایمان پر احسان فرمایا کہ ان کے درمیان انہی میں سے رسولِ عظیم کو مبعوث فرمایا، جو ان پر آیاتِ الٰہی کی تلاوت کرتے ہیں اور ان کے (قلوب و اذہان) کا تزکیہ کرتے ہیں اور انہیں کتاب و حکمت کی تعلیم دیتے ہیں، اگرچہ وہ اس سے پہلے کھلی گمراہی میں تھے،(آل عمران:164)‘‘۔ اور اللہ تعالیٰ کا یہ بھی حکم ہے: ''اور اپنے رب کی نعمت کا خوب چرچا کرو، (الضحیٰ:11)‘‘۔
قرآنِ مجید میں عید کا ذکر: اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: ''عیسیٰ ابن مریم نے دعا کی: اے ہمارے رب! ہم پر آسمان سے کھانے کا خوان نازل فرما، (تاکہ) وہ دن ہمارے اگلوں اور پچھلوں کے لئے عید ہو جائے اور تیری طرف سے (قدرت کی) نشانی ہو جائے اور ہمیں رزق عطا فرما اور تو سب سے بہتر رزق عطا فرمانے والا ہے (المائدہ:114)‘‘۔ اس آیتِ مبارَکہ میں حضرت عیسیٰ علیہ السلام نے ''خوانِ نعمت‘‘ کے نزول کے دن کو یومِ عید قرار دیا اور قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ نے ان کی اس دعا کا ذکر فرمایا۔ پس معلوم ہوا کہ نزولِ نعمت یا حصولِ نعمت کے موقع کو عید سے تعبیر کر سکتے ہیں؛ چنانچہ سعودی عرب میں ملک عبدالعزیز کی بادشاہت کے قیام کے دن کو ''عیدُالوَطَنی‘‘ کہا جاتا ہے اور سعودی عرب کے علماء سمیت کسی نے بھی اسے بدعت سے تعبیر نہیں کیا۔ بعض حضرات یہ کہتے ہیں کہ وہ تو دنیاوی معاملہ ہے، جبکہ میلادالنبیﷺ کو دین کا شِعار سمجھ کر کیا جاتا ہے، اس لئے اس کی مخالفت کی جاتی ہے۔ ہم شروع میں بیان کر آئے ہیں کہ رسول اللہﷺ اپنی ولادتِ مبارَکہ اور بعثت کا دن تشکر کا روزہ رکھ کر مناتے تھے اور رسول اﷲﷺ کا فعل شِعارِ دین ہی قرار پائے گا، کیونکہ نعمت کا تعلق بھی دین سے ہے۔ اسی طرح حدیثِ پاک میں ہے: ''جب نبیﷺ مدینہ تشریف لائے تو دیکھا کہ یہود یومِ عاشورا کا روزہ رکھتے ہیں، تو آپﷺ نے اس کی وجہ پوچھی؟، صحابہ نے عرض کی! یہ نیک دن ہے، اس دن اللہ نے بنی اسرائیل کو ان کے دشمنوںسے نجات عطا فرمائی تھی، تو موسیٰ علیہ السلام نے (اس کے شکرانے کے طور پر ) روزہ رکھا۔ (نبی کریمﷺ نے) فرمایا: میرا موسیٰ سے تعلق تمہاری بہ نسبت زیادہ ہے، پس آپ نے خود بھی روزہ رکھا اور (صحابۂ کرام کو بھی) روزہ رکھنے کا حکم دیا، (صحیح بخاری: 2004)‘‘۔ دوسری احادیثِ مبارَکہ میں ہے کہ رسول اللہﷺ نے یہود کی مشابہت سے بچنے کے لئے صحابۂ کرام کو دس محرم کے ساتھ ایک دن پہلے (یعنی نو محرم) یا ایک دن بعد (یعنی گیارہ محرم) کو ملا کر دو دن کا نفلی روزہ رکھنے کا حکم فرمایا، اس سے یہ منشائِ رسالت معلوم ہوا کہ اگر کوئی کام فی نفسہٖ شریعت کی نظر میں پسندیدہ ہے اور کسی جہت سے اس میں مشابہت کا عنصر پایا جاتا ہے، تو محض مشابہت کی وجہ سے اس پسندیدہ کام کو ترک نہیں کیا جائے گا بلکہ مشابَہتِ صُوری سے بچنے کے لئے کوئی بہتر حکمتِ عملی اختیار کی جائے گی۔

شیخ الحدیث علامہ غلام رسول سعیدی نے شرح صحیح مسلم ، جلد :3، ص:169تا190میں میلادالنبیﷺکے موضوع پر تفصیلی گفتگو کی ہے۔انہوںنے احناف کے مسلَّمہ اکابر علامہ ابن عابدین شامی کی ''شَرحُ الْمَوْلِد لِابْنِ حَجربحوالہ: جواہر البحار، جلد:3،ص:340‘‘ اورملاّ علی قاری کی ''اَلْمَوْلِدُالرَّوِی فیِ الْمَوْلدِالنَّبَوِی،ص:7-8‘‘ کے حوالے سے ثابت کیا کہ یہ اکابرِ اُمّت بھی میلادالنبی ﷺ کے جواز کے قائل تھے۔
برصغیر کی مسلّمہ دینی وعلمی شخصیت شاہ ولی اﷲ محدّث دہلوی ''اَلدُّ رُالثَّمِیْن فِیْ مُبَشَّرَاۃِ النَّبِیِ الْاَمِیْن‘میں لکھتے ہیں: ''میلاد کا اہتمام میرے والدِ گرامی(شاہ عبدالرحیم ) فرماتے تھے۔ میں یومِ میلاد کے موقع پر کھانا پکوایا کرتا تھا۔ اتفاق سے ایک سال کوئی چیز میسر نہ آسکی کہ کھاناپکواؤں ، صرف بھنے ہوئے چنے موجود تھے؛ چنانچہ یہی چنے میں نے لوگوں میں تقسیم کیے۔خواب میں دیکھاکہ آنحضرتﷺتشریف فرماہیں،یہی چنے آپ کے سامنے رکھے ہیں اورآپ نہایت خوش اورمسروردکھائی دے رہے ہیں (رسائلِ شاہ ولی اﷲ دہلوی:254)‘‘۔یعنی میلاد کایہ اہتمام رسول اللہﷺ کی نظرمیں محبوب تھا۔
شیخ عبداللہ بن محمد بن عبدالوہاب نجدی'' مختصر سیرۃ الرسول ‘‘ میں لکھتے ہیں:''ثُوَیبہ ابولہب کی باندی تھی ، جب نبیِ کریمﷺ کی ولادت ہوئی،تواس نے اپنے آقا کو بھتیجے کی ولادت کی خوشخبری سنائی،اس خوشی میں ابولہب نے انگلی کے اشارے سے اُسے آزادکردیا، بعدمیں ثُوَیبہ نے آپ ﷺکو دودھ بھی پلایا۔ ابولہب کے انتقال کے بعد کسی نے اسے خواب میں دیکھا اور پوچھاکہ تمہارے ساتھ کیاسلوک ہوا؟اس نے بتایا: تم سے جدا ہونے کے بعد عذاب میں مبتلاہوں، مگرہرپیرکے دن انگلی سے ٹھنڈک ملتی ہے۔پس مقامِ غور ہے کہ جب ابولہب جیسے دشمنِ رسول کافرکو ولادتِ محمد بن عبداللہ کی خوشی منانے پر جہنم میں راحت مل سکتی ہے تو ایک مسلمان کومحمد رّسول اللہﷺکی ولادت کی خوشی منانے پر بے پایاں اجرکیوں نہیں ملے گا؟یہ عبارت کاخلاصہ ہے‘‘۔ امام محمد بن اسماعیل بخاری نے بھی قدرے اختصار کے ساتھ اسی واقعہ کو بیان کیا ہے(صحیح بخاری:5101)‘‘۔
علامہ سعیدی نے علمائے دیوبند کے شیخِ طریقت حاجی امداداللہ مہاجر مکی کا یہ قول نقل کیا:''اور مَشرَب فقیر کا یہ ہے کہ محفلِ مَولِد میں شریک ہوتاہوں،بلکہ ذریعۂ برکات سمجھ کرہرسال منعقد کرتاہے اورقیام میں لطف ولذت پاتا ہوں، (فیصلہ ہفت مسئلہ:05)‘‘۔ وہ مزید لکھتے ہیں: ''ہمارے علماء مَولِد شریف میں بہت تنازعہ کرتے ہیں،تاہم علماء جواز کی طرف بھی گئے ہیں،جب صورت جواز کی موجود ہے،پھر کیوں ایسا تشدُّد کرتے ہیں اور ہمارے واسطے اِتَّباعِ حرمین کافی ہے،البتہ وقت قیام کے، اعتقاد تولُّد کا نہ کرنا چاہئے،اگر احتمالِ تشریف آوری کیا جاوے ، مُضائقہ(حرج)نہیں،کیونکہ عالم خَلق مقید بہ زمان ومکان ہے ،لیکن عالَم اَمر دونوں سے پاک ہے ، پس قدم رنجا فرمانا ذاتِ بابرکات کا بعید نہیں‘‘۔وہ مزید لکھتے ہیں: ''مولِد شریف تمام اہلِ حرمین کرتے ہیں، اسی قدر ہمارے واسطے حجت کافی ہے اور حضرتِ رسالت پناہ کا ذکر کیسے مذموم ہوسکتاہے؟ البتہ جو زیادتیاں لوگوں نے اختراع کی ہیں ، نہ چاہئیں اور قیام کے بارے میں کچھ نہیں کہتا، ہاں مجھ کو ایک کیفیت، قیام میں حاصل ہوتی ہے‘‘۔ وہ مزید لکھتے ہیں: ''اگر کسی عمل میںغیر مشروع عوارض (خارجی امور) لاحق ہوں ، تو اُن عوارض کو دور کرنا چاہئے، نہ یہ کہ اصل عمل سے انکار کردیا جائے،ایسے امور سے انکار کرنا خیرِ کثیر سے بازرکھنا ہے، جیسے قیام ِمولِد شریف،اگر بوجہ آنے نام آنحضرت کے کوئی شخص تعظیماً قیام کرے تو اس میں کیا خرابی ہے؟ جب کوئی آتاہے تولوگ اس کی تعظیم کے واسطے کھڑے ہوجاتے ہیں،اگر سردارِ عالَم وعالمیاں(رُوحی فداہُ)کے اسمِ گرامی کی تعظیم کی گئی تو کیا گناہ ہوا (شمائمِ امدادیہ:47,50,68)‘‘۔
علمائے دیوبند کے مُسَلمَّہ پیشوا علامہ اشرف علی تھانوی نے اس آخری جملے پر حاشیے میں لکھا ہے: '' البتہ اصرار کرنا اور تارکین سے نفرت کرنازیادتی ہے،(امدادالمشتاق:68)‘‘۔اس عبارت سے ہمیں اتفاق ہے ، کیونکہ کسی مستحب یا پسندیدہ امر کو ترک کرنے پر ملامت کرنا اسے واجب قرار دینا ہے اور یہ درست نہیں ہے ۔ اس حاشیے پر علامہ غلام رسول سعیدی نے یہ اضافہ کیاہے: ''اور میں کہتا ہوں کہ اس سے بھی بڑی زیادتی یہ ہے کہ محفلِ میلاد کو ''بدعتِ سَیِّئَہ‘‘ قرار دیا جائے اور میلاد شریف کرنے والوں سے نفرت کی جائے اور انہیں اہلِ بدعت کے نام سے پکارا جائے‘‘۔
ہمارا مَوقِف بھی یہی ہے کہ فی نفسہٖ میلادالنبیﷺ جائزبلکہ مستحسن ہے ، لیکن میلادالنبی کے عنوان سے قائم مجالس اور جلوسوں کو ہر قسم کی بدعات، مُنکَرات اور خرافات سے پاک ہوناچاہئے تاکہ چند لوگوں کی بے اعتدالیوں کی بنا پر ایک مستحسن امر کے خلاف منفی پروپیگنڈے کا جواز نہ مل سکے۔
مشہور اہلحدیث عالِم علامہ وحیدالزمان لکھتے ہیں :''اِس حدیث (یعنی رسول اللہ کا پیرکا روزہ رکھنے) سے ایک جماعتِ علماء نے آپ کی ولادت کی خوشی یعنی مجلسِ میلاد کرنے کا جوازثابت کیاہے۔اورحق یہ ہے کہ اگراس مجلس میں آپ کی ولادت کے مقاصداوردنیاکی رہنمائی کے لئے آپ کی ضرورت اورامورِرسالت کی حقیقت کوبالکل صحیح طریقہ پر اس لئے بیان کیاجائے کہ لوگوں میں اِس حقیقت کاچرچا ہواورسننے والے یہ ارادہ کرکے سُنیں کہ ہم کو اپنی زندگیاں اُسوۂ رسول کے مطابق گزارنا ہیںاور ایسی مجالس میں کوئی بدعت نہ ہو،تومبارک ہیں ایسی مجلسیں، اور حق کے طالب ہیں ان میں حصہ لینے والے، بہرحال یہ ضرور ہے کہ یہ مجلسیں عہدِ صحابہ میں نہ تھیں(لغات الحدیث، جلد:3،ص:119)‘‘۔
یہ بات درست ہے کہ موجودہ ہیئت پر جو مجالسِ میلادالنبیﷺ منعقد ہوتی ہیں یا جلوس کا شِعار ہے ، یہ جدید دور کی معروف اَقدار ہیں اور دین کے بہت سے شعبوں میں ہم نے دورِ جدید کے شِعار اور اَقدار کو اپنایا ہے، مثلاً : مُصحفِ مبارک میں سورتوں کے نام، آیات کی علامات، اِعراب لگاناوغیرہ۔ کتبِ احادیث بھی دوسری صدی ہجری میں یااس کے بعد مرتب ہوئیں ۔ قرآن وحدیث کو سمجھنے کے لئے تمام معاون علوم بعد میں ایجاد اور مُدَوَّن ہوئے ،عالی شان مساجدا ور مدارس قائم ہوئے ، دینی لٹریچر کی جدید اندازمیں نشرواشاعت کا انتظام ہوا۔اورکسی نظریے سے وابستگی کے اظہار کے لئے یا کسی غلط بات کے استرداد اوراس پر احتجاج ریکارڈ کرانے کے لئے جلوس نکالنے کی روش قائم ہوئی ۔ تقریباً تمام مکاتبِ فکر نے دینی مقاصد کے لئے جلوس نکالے، مثلاً: شوکتِ اسلام ، نفاذِ شریعت ، ناموسِ رسالت اور عظمتِ صحابہ وغیرہ کے نام پر جلوس نکالے جاتے رہے ہیں اور یہ تمام سرگرمیاں دین اور مقاصدِدین سے تعلق رکھتی ہیں اور انہیں اس دورمیں قبولِ عام مل چکا ہے ۔ اسی طرح دینی جماعتوں کاقیام، تبلیغی اجتماعات کاانعقاد، افتتاحِ بخاری یا ختمِ بخاری کی تقریبات ، مدارس کے سالانہ جلسے یا پچاس سالہ اورڈیڑھ سوسالہ جشن، سیرت النبی ﷺکے جلسوںکاانعقاد، انٹرنیٹ کادرسِ قرآن اوردین کے ابلاغ کے لئے استعمال وغیرہ ۔ مقامِ حیرت ہے کہ اس طرح کی تمام سرگرمیوں پر کبھی کسی نے کوئی فتویٰ صادر نہیں کیا، توصرف محافل وجلوسِ میلادالنبی ﷺ کو ہدفِ تنقید بنانا یا بدعت قرار دینا انتہائی زیادتی ہے۔
میلادالنبیﷺکو بدعت قرار دینے والوں کا کام آسان ہے کہ وہ فتویٰ دے کر اپنے فرض سے سبکدوش ہوجاتے ہیں، لیکن میرا درد اِس سے سوا ہے۔میری خواہش ہے کہ ان مجالس کو دینی تعلیم وتربیت کا مؤثر ذریعہ بنانا چاہئے اور محبتِ رسول اللہﷺکاثمر اِطاعت واِتباعِ نبوی کی صورت میں ظاہر ہوناچاہئے۔پیشہ وَر واعظین، موضوع روایات بیان کرکے لوگوں کی عقیدت کو اپنی دنیاسنوارنے کے لئے ابھارتے ہیں اوراِسے روحانی سرور کا ذریعہ بنالیاگیا ہے۔خیر کاکام اِس انداز سے ہوناچاہئے کہ اُس کے مثبت نتائج برآمد ہوں، لاؤڈ اسپیکر کا استعمال بقدرِضرورت اور مناسب وقت تک ہو،یہ نہ ہو کہ لاؤڈ اسپیکر کے شور سے لوگوں میں بیزاری اور نفرت پیداکی جائے،کسی اور کی غلط رَوِش کو اپنے لئے جواز نہ بنایاجائے۔چراغاں کے لئے بجلی کا استعمال قانون کے دائرے میں ہونا چاہئے ،ناجائز طریقے اختیار کرکے اُسے سعادت یا باعثِ اجرسمجھنا غیر شرعی فعل ہے،اﷲتعالیٰ فرماتاہے : ''اے ایمان والو ! (اللہ کی راہ میں ) اپنی پاکیزہ کمائی میں سے او ر اُن چیزوں میں سے خرچ کروجوہم نے تمہارے لئے زمین سے نکالی ہیں،اور ناقص چیزیں خرچ کرنے کا اِرادہ نہ کرو ،جن کو تم خود بھی چشم پوشی کئے بغیر(خوشدلی سے )نہ لو(بقرہ:267)‘‘۔ مالِ حرام کوحرام سمجھتے ہوئے اﷲکی راہ میں صدقہ کرنااوراس پراجرکی امیدکرناایمان کے منافی ہے۔
مفتی منیب ا لرحمان

http://dunya.com.pk/index.php/author/mufti-muneeb-ul-rehman/2015-01-03/9724/81049933#tab2

Read More:

http://peace-forum.blogspot.com/2013/01/celeberation-of-birth-of-prophet.html?m=0